‏احساس راشن رعایت پورٹل کم آمدن گھرانوں اور کریانہ مالکان کی رجسٹریشن کیلئے کھول دیا گیا ہے۔

اپنی درخواستیں دیے گئے پورٹل پر آن لائن جمع کروائیں۔

Link for Online registration

https://ehsaasrashan.pass.gov.pk/

وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے تخفیف غربت اور سماجی تحفظ ڈاکٹر ثانیہ نشتر نے جمعرات کو وزیر اعظم کے اعلان کردہ احساس راشن پروگرام کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ جن غریب خاندانوں کی ماہانہ آمدنی 31,000 روپے سے کم ہے ان کی رجسٹریشن پیر سے شروع ہو جائے گی۔

ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس مقصد کے لیے ایک ویب پورٹل تیار کیا جائے گا۔ جن خاندانوں کو اہل سمجھا جائے گا وہ یوٹیلیٹی اسٹورز اور ریٹیل اسٹورز (کریانہ کی دکانوں) سے رعایتی نرخوں پر آٹا، تیل، چینی اور دال جیسی روزمرہ استعمال کی اشیاء حاصل کر سکیں گے۔

گلیوں اور محلوں میں کھلے چھوٹے ریٹیل اسٹورز بھی یہ سہولت فراہ کریں گے اگر وہ اس سسٹم کے لیے رجسٹرڈ اور مجاز ہیں۔ڈاکٹر نشتر نے کہا کہ احساس نیشنل سوشل اکنامک رجسٹری کا سروے مکمل ہو چکا ہے۔ اس سروے کا استعمال اس نئے پرو غریب پروگرام کے لیے مستحق خاندانوں کی شناخت کے لیے کیا جائے گا۔

رجسٹریشن کا عمل مکمل ہونے میں تین یا چار ہفتے لگیں گے۔ فائدہ اٹھانے والوں کو اپنے کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ پر رجسٹرڈ موبائل فون نمبر کی ضرورت ہوگی جو مخصوص اسٹورز کے سامنے پیش کیا جائے گا جہاں سے سبسڈی والے نرخوں پر خریداری کی جائے گی۔رجسٹرڈ 20 ملین خاندانوں میں سے ہر ایک کو ماہانہ 1,000 روپے کی سبسڈی دی جائے گی۔

اس رقم کو اگلے مہینے تک بھی لے جایا جا سکتا ہے اگر ایک مہینے میں فائدہ نہ اٹھایا جائے۔ریٹیل اسٹورز جو اس پروگرام کے لیے رجسٹرڈ ہونا چاہتے ہیں ان کی جسمانی طور پر تصدیق کی جائے گی اور انہیں سبسڈی کی رقم وصول کرنے کے لیے درست بینک اکاؤنٹس کی ضرورت ہوگی۔

سبسڈی کی رقم میں ایک عقلی منافع شامل ہوگا – ایک ترغیب کے طور پر – مالکان کے لیے خوشی سے زیادہ سے زیادہ غریب لوگوں کو سبسڈی والی اشیائے خوردونوش فراہم کریں۔احساس کے نتائج کے مطابق اس پروگرام سے ملک کی 60 فیصد آبادی مستفید ہوگی۔ایک سوال کے جواب میں ڈاکٹر نشتر نے کہا کہ پروگرام کے تحت 120 ارب روپے کی سبسڈی دی جا رہی ہے۔

اس رقم کا 65 فیصد صوبے فراہم کریں گے جبکہ باقی 35 فیصد وفاقی حکومت دے گی۔ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کے مشیر برائے خزانہ شوکت ترین اس پروگرام پر انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ سے بات کریں گے۔

احساس راشن سے مستفید ہونے والوں کی شناخت کیسے کی جائے گی؟
(Identification procedure of beneficiaries)

ایس اے پی ایم (اسپیشل اسسٹنٹ ٹو پرائم منسٹر ) ثانیہ نشتر نے کہا کہ نئے احساس نیشنل سوشل اکنامک رجسٹری (این ایس ای آر) سروے کی مدد سے فائدہ اٹھانے والوں کی شناخت کی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ احساس راشن پروگرام آٹا، دالوں، گھی یا کوکنگ آئل کی خریداری پر 20 ملین خاندانوں میں سے ہر ایک کو ماہانہ 1000 روپے کی سبسڈی فراہم کرے گا۔

تقاضے؟
(Requirements)

انہوں نے زور دیا کہ جو لوگ اس پروگرام سے فائدہ اٹھانا چاہتے ہیں ان کے پاس اپنے کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ کے ساتھ اپنے درست رجسٹرڈ موبائل نمبر ہونا ضروری ہے۔

رجسٹرڈ خریدار انہیں راشن کارڈ جاری کرنے کے بعد 30 فیصد سبسڈی پر نامزد کریانہ یا یوٹیلیٹی اسٹورز سے راشن خرید سکیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ فائدہ حاصل کرنے کے اہل افراد کی فہرست احساس ڈیٹا بیس کی مدد سے جانچ پڑتال کے عمل کے بعد تین یا چار ہفتوں کے اندر ظاہر کی جائے گی جبکہ اس دوران کریانہ اسٹورز کو رجسٹر کیا جائے گا۔

احساس نے نیشنل بینک آف پاکستان  کے ساتھ مل کر ملک بھر میں کریانہ اسٹورز کے نیٹ ورک کے ذریعے مستحقین کی خدمت کے لیے ڈیجیٹل طور پر فعال موبائل پوائنٹ آف سیل سسٹم تیار کیا ہے۔

رجسٹریشن کیسے کریں؟
How to get registered?

طریقہ کار کے بارے میں، ڈاکٹر ثانیہ نے کہا کہ کریانہ کے تاجروں کو اپنے اینڈرائیڈ فونز پر متعلقہ ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے، صارفین کے سی این آئی سی نمبرز درج کرنے اور بیک اینڈ سے تصدیق کے بعد فوائد کو فوری طور پر منتقل کرنے کی ضرورت ہوگی۔

صارف کو ایک تصدیقی کوڈ ملے گا جو ایپ میں کریانہ مرچنٹ کے ذریعے درج کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا ،”اس طرح کا نظام بدعنوانی اور بدعنوانی کو روکنے کے لیے تیار کیا گیا ہے”۔

ڈاکٹر ثانیہ نے امید ظاہر کی کہ رجسٹریشن کے عمل کی تکمیل کے بعد یہ سسٹم تین سے چار ہفتوں کے اندر کام کر جائے گا۔ملک کے کسی بھی کونے سے سبسڈی کی رقم وصول کرنے کے لیے درست بینک اکاؤنٹ رکھنے والے کریانہ تاجر جسمانی تصدیق کے بعد اس پروگرام کے تحت رجسٹر ہونے کے اہل ہوں گے۔ ڈاکٹر ثانیہ نے کہا کہ حکومت رجسٹرڈ تاجروں کو سبسڈی کی رقم پر منافع بھی دے گی تاکہ وہ زیادہ سے زیادہ لوگوں کی خدمت کرنے کی ترغیب دیں۔

اہلیت کا معیار
Eligibility criteria

ثانیہ نشتر نے مزید بتایا کہ احساس راشن پروگرام پاکستان بھر کے 20 ملین گھرانوں کا احاطہ کرے گا جن کا غربت کا سکور 39 سے کم ہے اور 31,000 روپے ماہانہ آمدنی ہوگی۔

ایس اے پی ایم (اسپیشل اسسٹنٹ ٹو پرائم منسٹر) نے کہا کہ ہمارے اندازے کے مطابق پاکستان کی 60 فیصد آبادی اس پروگرام سے مستفید ہوگی۔ انہوں نے مزید کہا کہ “اس نظام کو استعمال کرتے ہوئے مزید فوائد متعارف کرانے کے ساتھ ساتھ رقم میں اضافہ کیا جا سکتا ہے۔”

انہوں نے کہا کہ احساس نے 38 ملین گھرانوں کا سماجی و اقتصادی ڈیٹا اکٹھا کیا ہے جس سے نئے پروگرام شروع کرنا آسان ہو گیا ہے۔

ایک سوال کے جواب میں ڈاکٹر ثانیہ نے کہا کہ دیہی علاقوں میں چھوٹے کریانہ اسٹورز کو اس اقدام کا حصہ بننے کی ترغیب دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ تاجروں کی بیداری اور تعلیم کے لیے ایک تیز رفتار مہم شروع کی جائے گی۔

کیا سرکاری ملازمین اہل ہیں؟
Are govt employees eligible?

انہوں نے وضاحت کی کہ 31,000 سے کم سرکاری ملازمین اس پروگرام کے لیے درخواست دینے کے اہل ہوں گے جب کہ کابینہ کے متفقہ فیصلے کے مطابق ملازمت کے لیے بیرون ملک سفر کرنے والوں کو اس سے باہر نہیں رکھا جائے گا۔

کل سبسڈی

ڈاکٹر ثانیہ نے کہا کہ اس پروگرام کے تحت 120 ارب روپے کی سبسڈی دی جا رہی ہے۔ صوبائی حکومتیں بجٹ میں 65 فیصد جبکہ وفاقی حکومت کا حصہ 35 فیصد ہو گا۔

DR.SANIA MIRZA PRESS CONFERENCE

By SAK

2 thoughts on “EHSAAS Ration/Rashan PROGRAM COMPLETE DETAIL IN URDU”
  1. I have looked up those 46k btc that Ukraine apparently ownes. I have found articles saying those btc are what government officials have declared to own as of April 2021. Do these btc belong to the Ukrainian gov itself or to the members of it now?Hi Rashi, This article on Where to stay in Florence might help you. We also have one on where to stay in Milan! Have a great trip!Hi Monica, thanks for the comment. If your parents don’t have many possessions or property, and have a simple plan for the distribution of their estate, there is very little point in them paying for a legal professional. They will be paying hundreds of dollars for somebody who can give them legal advice, but they would not even need legal advice to create their Will. We would recommend that they at least look at a service like ours before hiring a lawyer.Pretty nice post. I simply stumbled upon your weblog and wished to say that I have truly enjoyed surfing around your blog posts.In any case I�ll be subscribing on your feed and I hope you write once more very soon! watch tv online free streaming

Comments are closed.